Select Language :

درمیان وضوناقض وضوکاتحقق ہونے سے وضوکاحکم:

سوال:    ایک شخص وضوکے دوران مثلاًچہرہ اورہاتھ دھوچکاتھااس کے بعدخروج ریح یاخروج دم پیش آگیاایسی صورت میں وہ شخص ازسرنووضوکرے یابغیراعادہ کے وضومکمل کرے؟ایک فریق کہتاہے کہ وضومکمل نہیں ہواتوٹوٹنے کاسوال ہی پیدانہیںہوتالہذابغیراعادہ کے وضومکمل کرکے نمازپڑھ لے،نمازدرست ہوجائے گی۔دوسرافریق کہتاہے کہ جب نواقض وضوکامل وضوکوتوڑسکتاہے تودوتین رکن کوبطریق اولیٰ توڑسکتاہے،نیزاگرعمل مکمل ہونے کے بعدہی باطل وفاسدہونے کاحکم صادرکیاجائے توپھردرمیان صلوٰۃوضومیں کوئی فسادکی صورت پیش آئے توفاسدوباطل نہیں ہوناچاہیے،نیزتیمم میںصرف چہرہ کاتیمم کیاہے اورنواقض تیمم میں سے کوئی چیزپیش آگئی تواس کاحکم کیاہوگا؟ہردوفریق قیاس سے کام لے رہے ہیں،جواب بحوالہ عنایت فرمائیں تواحسان ہوگا۔

الجواب حامداًومصلیاً

وضومکمل کرنے سے پہلے اگرناقض وضوپیش آجائے توجن اجزائے وضوکوپہلے اداکرچکاہے ان کابھی نقض ہوگیا،ازسرنووضوکرناضروری ہے،یہ مسئلہ صریحہ جزئیہ طحطاوی علیٰ مراقی الفلاح،شامی،الأشباہ والنظائروغیرہ میں موجودہے۔قیاس کرنے کی ضرورت ہی نہیں تتبع کی ضرورت ہے،ماشاء اللہ کتابیں آپ کے پاس موجود ہیں،تلاش کرلیں۔یہی حکم تیمم کا ہے ،تیمم کی’’الشرط السادس‘‘کے ذیل میں مراقی الفلاح میں جزئیہ دیکھیں۔فقط واللہ تعالیٰ اعلم

أملاہ العبدمحمود غفرلہ دارالعلوم دیوبند ، ۱؍ ۵؍ ۱۴۰۶ ھ (فتاویٰ محمودیہ:۵؍۶۰و۶۱)

کتب ورسائل

قرآن
حدیث
اسلامیات
سیرت رسولؐ
عقیدہ
فقہ
تصوف
تقریر

سوال/جواب

تمباکو کھانے کے بعد وضو:
شراب پینے کے بعدنشہ آجائے تووضوٹوٹ جاتاہے:
تمباکونوشی اورنسوارکشی سے وضوٹوٹتاہے یانہیں:
شراب پینے کے بعدنشہ آجائے تووضوٹوٹ جاتاہے:
وضوء کے فرائض وسنن
وضو میں واجبات
چہرہ کی حد کہاں سے کہاں تک ہے اور داڑھی کے غسل کاحکم
گنجے سروالے آدمی کے چہرے کی حدود کاحکم
پیشانی کے اوپرکے حصہ میں بال نہ ہوں تووضومیں چہرہ کہاں تک دھوناچاہیے
عورت کے ناک،کان میں سوراخ ہوتووضومیں پانی پہنچاناضروری ہے یانہیں

         آگے پڑھئے