Select Language :

بجائے مسواک کے برش استعمال کرنا :

سوال:    جو شخص بلا عذر بجائے مسواک کے بالوں کا برش استعمال کرے تو جائز ہے یا نہیں  ؟

الجواب وباللّٰہ التوفیق

مسواک کے بارے میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے جو صورت علی المواظبۃ ثابت ہے وہ یہی ہے کہ لکڑی سے مسواک کی جائے اورلکڑیوں میں بھی پیلو درخت کی لکڑی زیادہ پسندیدہ ہے۔لیکن اگر لکڑی کی مسواک اتفاقاً موجود نہ ہو تو انگلی سے یا موٹے کپڑے وغیرہ سے دانت صاف کر لینا مسواک کے قائم مقام ہو سکتا ہے ۔

قال فی الھدایۃ: وعند فقدہ یعالج بالأصبع۔

اس سے ظاہر ہوا کہ برش کا اصل حکم بھی یہی ہے کہ اگر اتفاقاً مسواک موجود نہ ہو تو اس کا استعمال قائم مقام مسواک کے ہوجائے گا۔ لیکن بطور فیشن اس کی عادت ڈال لینا مناسب نہیں اور نہ بلا ضرورت وہ مسواک کا قائم مقام ہو سکتا ہے بالخصوص آج کل جو برش عموماً اس کام کے لئے آتے ہیں ان میں خنزیر کے بالوں کا احتمال قوی ہے اس لئے بہتر یہی ہے کہ برش کے استعمال سے احتراز کیا جائے ، کہیں مسواک ہاتھ نہ آئے تو انگلی وغیرہ سے صاف کر لینے پر اکتفا کریں ۔واللہ سبحانہ و تعالیٰ اعلم (فتاویٰ دارالعلوم یعنی امداد المفتین کامل ۲؍۲۴۲و۲۴۳)

کتب ورسائل

قرآن
حدیث
اسلامیات
سیرت رسولؐ
عقیدہ
فقہ
تصوف
تقریر

سوال/جواب

تمباکو کھانے کے بعد وضو:
شراب پینے کے بعدنشہ آجائے تووضوٹوٹ جاتاہے:
تمباکونوشی اورنسوارکشی سے وضوٹوٹتاہے یانہیں:
شراب پینے کے بعدنشہ آجائے تووضوٹوٹ جاتاہے:
وضوء کے فرائض وسنن
وضو میں واجبات
چہرہ کی حد کہاں سے کہاں تک ہے اور داڑھی کے غسل کاحکم
گنجے سروالے آدمی کے چہرے کی حدود کاحکم
پیشانی کے اوپرکے حصہ میں بال نہ ہوں تووضومیں چہرہ کہاں تک دھوناچاہیے
عورت کے ناک،کان میں سوراخ ہوتووضومیں پانی پہنچاناضروری ہے یانہیں

         آگے پڑھئے